April 14, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/bodyfitnessinfo.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253
نازحون في رفح (أرشيفية- رويترز)

غزہ کی پٹی میں جاری اسرائیلی جنگ کی وجہ سے امریکہ میں نہ صرف عوامی حلقوں بلکہ سرکاری حلقوں میں بھی بے چینی بڑھتی جا رہی ہے۔ اس کا اندازہ غزہ جنگ کی وجہ سے بہ طور احتجاج اپنے عہدوں سے استعفیٰ دینے سے کیا جا سکتا ہے۔

غزہ پر اسرائیلی جنگ اپنے ساتویں مہینے میں داخل ہو رہی ہے۔ تل ابیب کے ساتھ جو کچھ ہو رہا ہے اس کے بارے میں امریکہ کے اندر سے مذمت کی آوازیں بڑھتی جا رہی ہیں۔

امریکی حمایت کے خلاف احتجاج

مشرق وسطیٰ میں انسانی حقوق کے امور پر کام کرنے والے امریکی محکمہ خارجہ کے ایک اہلکار نے غزہ کی پٹی پر اسرائیلی جنگ کے لیے امریکی حمایت کے خلاف احتجاجاً اپنے استعفیٰ کا اعلان کیا۔

وزارت خارجہ میں جمہوریت، انسانی حقوق، اور محنت کے دفتر میں خارجہ امور کے افسر انیل شیلن نے زور دیا کہ انہوں نے اپنی ایک سال کی سروس کے بعد استعفیٰ دیا، کیونکہ انہوں نے یہ نتیجہ اخذ کیا کہ جب تک واشنگٹن مشرق وسطیٰ میں اسرائیل کو ہتھیار بھیجتا رہے گا انسانی حقوق کو فروغ دینے کی کوشش کرنے کا کوئی فائدہ نہیں ہے۔

اس نے کہا کہ وہ اپنے عہدے کی مدت کے دوران امریکی محکمہ خارجہ میں انسانی حقوق کے دفاع کے لیے اپنا کام کرنے سے قاصر رہی۔

انہوں نے ’سی این این‘ کے ساتھ ایک انٹرویو میں غزہ کی پٹی میں بڑے شہری نقصانات کے باوجود امریکہ کی طرف سے اسرائیل کے لیے فوجی سازوسامان کی مسلسل مدد سے انسانی حقوق کے دفاع کی کوشش ناممکن ہو گئی ہے۔ غزہ میں بڑے پیمانے پر عام شہریوں کی اموات کے باوجود امریکہ کے لیے اسرائیل کے لیے دیگر انتہائی اہم ترجیحات سے زیادہ اہم سمجھا جاتا ہے۔

انہوں نے مزید کہاکہ “لوگ حیران اور خوفزدہ ہیں کہ امریکی حکومت غزہ میں کیا کر رہی ہے۔ وہ محکمے میں بہت سے لوگوں کی طرف سے بولتی ہیں، اس بات کی نشاندہی کرتی ہیں کہ اس شعبے میں امریکی انتظامیہ کی پالیسی کے خلاف بہت سی آوازیں ہیں‘‘۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسرائیل کی حمایت کی اہمیت کے بارے میں امریکی محکمہ خارجہ کے کچھ ملازمین کے تبصروں کو اکثر ملازمین کی طرف سے مخالفت کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ ان کے استعفے کے بارے میں عوامی سطح پر بات ان ساتھیوں کی درخواست پر ہوئی جن کے ذاتی حالات نے انہیں استعفیٰ دینے سے روک دیا۔

انہوں نے امید ظاہر کی کہ اس کا استعفیٰ ان کے علاوہ بہت سے دوسرے لوگوں کے لیے بھی واضح طور پر اپنی رائے کا اظہار کرنے کا ایک طریقہ ہو گا۔

قابل ذکر ہے کہ ایک امریکی رپورٹ میں نشاندہی کی گئی ہے کہ شیلن کا استعفیٰ غزہ پر جاری جنگ میں اسرائیل کی امریکی حمایت کے خلاف احتجاج میں سب سے اہم استعفیٰ سمجھا جا رہا ہے۔ اس سے قبل گذشتہ اکتوبر میں اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ کے ایک سینیر اہلکار جوش پال نے غزہ جنگ میں اسرائیل کی اندھی حمایت کے خلاف بہ طور احتجاج استعفیٰ دے دیا تھا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *