May 23, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/bodyfitnessinfo.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253
National Security Council spokesman John Kirby speaks during a press briefing at the White House, Thursday, Nov. 30, 2023, in Washington. (AP Photo/Evan Vucci)

وائٹ ہاؤس نے پیر کے روز ایک بیان میں کہا ہے’ قاہرہ میں جنگ بندی کے لیے سامنے آنے والی نئی تجاویز سے حماس کو آگاہ کر دیا گیا ہے۔ اب حماس پر ہے کہ وہ ان تجاویز کا کیا رد عمل دیتا ہے۔ ‘ واضح رہے سات اکتوبر سے اب تک غزہ میں 33207 فلسطینی ہلاک ہو چکے ہیں۔

قاہرہ میں ہونے والے جنگ بندی مذاکرات میں سی آئی اے چیف ولیم برنز، اسرائیلی موساد چیف ڈیوڈ بارنیا ، مصر کے انٹیلیجنس چیف اور قطری مذاکرات کار شامل ہے۔ مگر ان مذاکرات سے کچھ حاصل ہو سکے گا یا نہیں ، اس پر کچھ کہنا قبل از وقت ہوگا۔

امریکی قومی سلامتی کونسل کے ترجمان جان کربی نے کہا ہے ‘قاہرہ میں جنگ بندی کے لیے سامنے آنے والی نئی تجاویز سے حماس کو آگاہ کر دیا گیا ہے۔ اب یہ حماس پر ہے کہ وہ ان تجاویز کا کیا رد عمل دیتا ہے۔’ البتہ جان کربی نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے مذاکرات کی تفصیلات بتانے سے انکار کیا ہے۔

خیال رہے یہ پہلا موقع ہے کہ امریکہ نے سی آئی اے سربراہ کی قاہرہ میں ہونے والے جنگ بندی مذاکرات میں شرکت کی تصدیق کی ہے۔ صدر جو بائیڈن نے ولیم برنز کو مذاکراتی ٹیم کا حصہ وزیراعظم نیتن یاہو سے فون پر ہونے والی بات چیت کے بعد بنایا ہے۔

اسرائیلی وزیراعظم سے بات چیت کے دوران صدر جوبائیڈن نے اسرائیل کو خبردار کیا ہے کہ اگر غزہ کے شہریوں کی حفاظت یقینی نہ بنائی گئی تو اسرائیل کے لیے امریکی پالیسی میں تبدیلی آئے گی۔

وائٹ ہاؤس کے جاری کردہ بیان کے مطابق صدر جوبائیڈن نے اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو پر زور دیا ہے کہ وہ جنگ بندی مذاکرات کو نتیجہ خیز بنائے۔ نیز یرغمالیوں کی گھروں کو واپسی میں مزید کسی قسم کی تاخیر نہ کرے۔

اسرائیل ان دنوں اپنے سب سے بڑے اتحادی امریکہ سمیت کئی دوسرے ملکوں کی طرف سے سخت دباؤ میں ہے کہ وہ جنگ بندی پر اتفاق کرے۔ حتیٰ کہ اسے اس مسلسل جنگی سلسلے میں اب تک اسلحہ سپلائی کرنے والے ملکوں کی طرف سے بھی جنگ بندی کرنے کا کہا جا رہا ہے۔

جان کربی نے پیر کے روز کہا ہے کہ صدر جوبائیڈن کی خواہش کے مطابق اسرائیل غزہ میں امداد فراہمی میں حائل رکاوٹوں میں کمی کر رہا ہے۔ گزشتہ روز ہم نے دیکھا ہے کہ 300 امدادی ٹرک غزہ میں داخل ہوئے ہیں۔ لیکن ہم انسانی بنیادوں پر اس سے زیادہ اور مستقل امداد فراہمی بغیر کسی رکاوٹ کے دیکھنا چاہتے ہیں۔’

اسرائیلی حکام کا امریکی دورہ بھی آئندہ دنوں متوقع ہے۔ تاکہ رفح پر جارحانہ اسرائیلی حملے سے متعلق امریکہ کے خدشات پر بات چیت ہو سکے۔

دوسری جانب اسرائیل کے وزیر اعظم نیتن یاہو نے اعلان کیا ہے کہ اسرائیل نے رفح کے گنجان آباد شہر پر ایک بھر پور فوجی حملے کے لیے ایک تاریخ بھی مقرر کر لی ہے۔ تاکہ غزہ کے جنوب میں حماس کے اس آخری گڑھ کو ختم کا جا سکے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *